Saturday, August 21, 2010

غزل : جب ہم ان سے جدا ہو رہے تھے



جب ہم ان سے جدا ہو رہے تھے

سچ پوچھو تو فنا ہو رہے تھے

خوشیوں کی باتیں تو کیا کیجئےگا

آنسو بھی ہم سے جدا ہو رہے تھے

لہو کے جو قطرے بچے تھے بدن میں

ووہ جوشے-جگر سے رواں ہو رہے تھے

کہاں مل پاۓ ہے عاشق جہاں میں

یہ جملے زبانی بیان ہو رہے تھے

نئی ووہ کہانی شروع کر رہے تھے

ہم گزرا ہوا فلسفہ ہو رہے تھے

جو مشہور تھے 'بیوفا' اس جہاں میں

واہی آج پھر بیوفا ہو رہے تھے.
  

- شاہنواز صدیقی


हिंदी में पढ़ने के लिए यहाँ क्लिक करें
ग़ज़ल: जब हम उनसे जुदा हो रहे थे

6 comments:

  1. यार देवनागरी में लिख देते...

    ReplyDelete
  2. bhai qatre ko katre na kijiye log kutre samajh lenge.

    ReplyDelete
  3. T.M.Zeyaul Haque sahab maine katre ko Qatre kar diya hai. Batane aur hosla afzai ke liye bahut-bahut shukriya

    ReplyDelete
  4. @ boletobindas

    dost aap ise devnagri mein mere blog premras par padh sakte hain.

    http://premras.blogspot.com/2010/08/blog-post_21.html

    ReplyDelete
  5. alas!....Shah Nawaz jee......mai urdu padh nahi sakti....but i luv it as as read in devnagri.....lekin ab sirf is blog ke liye apne frnds se seekhungi....................thamx for inspiration..

    ReplyDelete